ڈی جے خالد

ڈے جے خالد اور باکسر کوبھاری جرمانہ ، کرپٹو کرنسی کو تشہیر کیا لیکن یہ نہیں بتایا کہ انکو اس تشہیر کے پیسے ملےہیں. جرمانہ $767,500 ہوا.
کرپٹو کرنسی جسکا آغاز بٹھ کوائین سے ہوا تھا اور اس کے بعد بہت ساری نئی کرنسی بھی متعارف کروائیں گئیں اب ناپید ہوتی جا رہی ہیں . کیونکہ بہت سے ملکوں نے اس پر پابندی لگانا شروع کر رکھی ہے جسکا پہلا آغاز چین سے ہوا تھا .
یہ کرنسی کمپوٹر میں لگے اچھے گرافک کارڈ کی مدد سے بہت سارے کوڈز کو ملا کر بنائی جاتی ہے . جسکو مائیننگ یا عام زمان میں کان کنی کہا جاتا ہے . کان کنی جیسے کوئلے کی کان سے کوئلہ نکالنے والے کو کان کن کہا جاتا ہے .
چین جیسے ملکوں میں بڑے بڑے مائینگ فارمز ، یا کانز بنائیں گئیں اور اولین دنوں میں انکے بنانے والے آج اربوں پتی ہیں. لیکن عربوں بتی وہی ہیں جنہوں نے یہ ڈجیٹل کرنسی کسی ملک کی کرنسی میں تبادل کروا لی تھی. جنکو کرپٹو کرنسی کا مکمل نہیں پتا انکی جان کاری کے لیے مزید عام لفظوں میں یہ کہ جیسے آپ کے کاغذی نوٹ پر ایک سیریئل نمبر ہوتا ہے جو اس نوٹ کو دوسرے نوٹوں سے منفرد بناتا ہے ایسے ہی کرپٹو کرنسی بغیر کسی کاغذ،پلاسٹک ، چمڑے یا لوہے کہ بجائے کمپوٹر پر جاری یہ نمبر ہوتا ہے.
پاکستان میں بھی شوبز اور سوشل میڈیا کا بڑا نام وقار ذکا بچھلے دنوں اسی سے ملتا جلتا کاروبار متعارف کروا رہے تھے. یاد رہے کے بڑے ملکوں جیسا کہ امریکہ برطانیہ میں اگر آپ اچھے خاصے جانے جاتے ہیں ، آپ کسی بھی چیز کو بغیر یہ بتائے کہ اسکا بنانے والا آپ کو سپانسر ، یا مالی فائیدہ دے رہا ہے ، آپ متعارف نہیں کروا سکتے ، کیونکہ آپ کے نام کے عزت کی وجہ سے لوگ اس جانب مبزول ہو سکتے ہیں.
ایک بٹھ کوائین کی قیمت ڈیڑھ لاکھ سے اوپر روپے تک رہی ہے . روپیا چاہے پاکستانی ہو یا ہندوستانی.

Google

Facebook Comments