ًمیرپورکاکڑہ ڈکیتی قتل اپنے منتقی انجام پر .

رپورٹ (جموں کشمیر نیوز)تین ہفتے قبل کاکڑہ ٹاؤن میں ہونے والے قتل اور ڈکیتی کا ڈراپ سین، واقعہ میں ملوث افراد خاتون سرغنہ اور ماسٹر مائنڈسمیت گرفتار، اسلحہ اور دیگر اشیاء برآمد21ستمبر کی شب کاکڑہ ٹاؤن میں ہونے والی واردات میں 6افراد نے ایک گھر میں گھس کر دوران ڈکیتی 70سالہ خاتون کو قتل کرنے کے بعد لاکھوں روپے مالیت کے زیوارت اور نقدی لوٹ لی تھی۔ پولیس نے بیس دن کے اندر اندر ہی واقعہ میں ملوث پانچ افراد کو خاتوں سرغنہ سمیت گرفتار کرلیا۔ گرفتار شدگان کا تعلق بھمبر، چکوال، جلالپور جٹاں، علی پور، اور گجرانوالہ سے ہے۔ پولیس عوام کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے ہر ممکن اقدام اٹھا رہی ہے۔ آزادکشمیر کی پولیس پیشہ وارانہ افراد پر مشتمل ہے۔ جرائم کے خاتمے کے لیے عوام پولیس کے ساتھ تعاون کرے۔ غیر مقامی افراد کی رجسٹریشن کے لیے مہم تیز کردی گئی ہے، ایس ایس پی میرپور ریاض حیدر بخاری کی اسلام گڑھ میں پریس کانفرنس۔ تفصیلات کے مطابق تین ہفتے قبل کاکڑہ ٹاؤن میں ہونے والے قتل اور ڈکیتی کی واردات میں ملوث افراد کو گرفتار کرلیا گیا۔ اس حوالے سے ایس ایس پی میرپور ریاض حیدر بخاری نے تھانہ اسلام گڑھ میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس کی ۔ اس موقع پر ڈی ایس پی میرپور راجہ ندیم عارف، ایس ایچ او اسلام گڑھ چوھدری وسیم نواز، ایڈمنسٹریٹر ضلع کونسل میرپور چوھدری عبدالمالک، سابق ایڈمنسٹریٹر بھمبر چوھدری اسلم شاہین، سابق ایڈمنسٹریٹر اسلام گڑھ لالہ تصدق علی رفیقی، پیپلز پارٹی کے رہنما چوھدری محمود احمد، صدر انجمن تاجراں اسلام گڑھ حاجی محمد یونس فائیکو،ڈاکٹر عبدالقیوم، بابو محمد حنیف، تھانیدار محمد اقبال سمیت عوام علاقہ کی کثیر تعداد موجود تھی۔ ایس ایس پی میرپور ریاض حیدر بخاری نے اس حوالے سے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ 21ستمبر عاشورہ کی شب چھ افراد نے کاکڑہ ٹاؤن میں شکیل احمد کے گھر میں داخل ہوکر کاروائی کی۔ ملزمان گھر کی پچھلی طرف سے مکان کی چھت پر چڑھے اور واش روم کے روشندان کا شیشہ ہٹا کر کمرے میں داخل ہوئے۔ مختلف کمروں کی تلاشی لینے کے بعد انہوں کمرے میں سوئی ہوئی سلامت بی بی کو جگایا اس دوران شکیل اور دیگر اہل خانہ کے اوپر آجانے کے بعد آپس میں جھگڑا شروع ہوگیا جس دوران سلامت بی بی فوت گئیں۔ ملزمان کاروائی کرنے کے بعد موقع سے فرار ہوگئے۔ انہوں نے کہا کہ یہ لوگ ایک منظم بین الصوبائی گروہ ہے جو پاکستان بھر میں مختلف وارداتوں میں ملوث ہے اور مختلف مقدمات میں مطلوب ہے۔ جو افراد پکڑے گئے ان کی سرغنہ صائمہ بی بی ساکن علی پور ہے جو ان کو وارداتوں کے لیے منظم کرتی اور انہیں اسلحہ فراہم کرتی تھی۔ واقعہ میں ملوث محمد افضل ولد محمد حسین ساکن گجرانوانہ حال بنگڑیلہ شکیل احمد کے چچاکے مکان میں محمود آباد بنگڑیلہ میں رہائش پذیر تھا۔ واقعہ میں ملوث عمران اقبال عرف تُناں ولد بشیر احمد بھمبر کلاں ضلع بھمبر کا رہائشی ہے اور محمد افضل کا بھانجا ہے ۔ اس کا افضل کے گھر میں آنا جانا تھا۔ واقعہ میں ملوث دیگر افراد میں ساجد حسین عرف جنگلی ساکن چکوال، توکل حسین عرف ملاں آصف جلال پور جٹاں کے رہائشی ہیں جبکہ ایک شخص ابھی تک گرفتار نہیں ہوسکا۔ گرفتار ہونے والے تمام ملزمان پاکستان کے مختلف علاقوں اور ضلع میرپور اور بھمبر میں چوری، ڈکیتی، قتل اور دیگر کئی وارداتوں میں ملوث و مطلوب ہیں۔ یہ ایک منظم گروہ تھا جو بہت ہی پروفیشنل طریقہ سے کارائیاں کررہا تھا۔ انہوں نے اس گھر میں تین دفعہ واردات کرنے کی کوشش کی تاہم پہلی دو دفعہ وہ ناکام رہے جبکہ تیسری مرتبہ وہ کاروائی کرنے میں کامیاب رہے۔ ان کی سرغنہ صائمہ نے واردات کے دوران پوری رات جڑی کس ڈیم کے کنارے گزاری اور کاروائی مکمل ہونے کے بعد اس کے ساتھیوں نے اسے وہاں سے اپنے ساتھ لے لیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ منظم گروہ تھا اور انہوں نے اپنے پیچھے کوئی نشان نہیں چھوڑا تھا۔ فنگر پرنٹس سے بچنے کے لیے انہوں نے ہاتھوں پر کپڑے چڑھائے ہوئے تھے۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ جو موبائل سم استعمال کررہے تھے وہ بھی ان کے نام نہیں تھیں۔ مزید یہ کہ انہوں نے واردات کے دوران اور واردات کے بعد موبائل پر ماسوائے ایک کال کے کوئی کمیونیکشین نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ اس واقعہ کو منطقی انجام تک پہنچانے میں عوام علاقہ اوربالخصوص میڈیا نے ہمارابہت ساتھ دیا ہے اور حالات کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے ہمارا قوبھرپور ساتھ دیا ۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے پوری طرح اس مقدمہ پر فوکس کرکے اس کو پایہ تکمیل تک پہنچایا۔ انہوں نے کہا کہ مجھے اپنے پولیس آفیسران پر مکمل اعتماد اور فخر ہے جنہوں نے اس میں بھرپور محنت کی۔ انہوں نے کہا کہ پولیس عوام کو ہر ممکن تحفظ فراہم کرنے کی کوشش کررہی ہے اور اس حوالے سے پولیس چوبیس گھنٹے آپ کی خدمت کے لیے حاضر ہے۔ اس حوالے سے عوام کو بھی چاہیے کہ پولیس کہ ساتھ تعاون کریں اور ارد گرد کے ماحول پر نظر رکھیں اور کسی بھی مشکوک شخص کے حوالے سے پولیس کو فوری اطلاع دیں۔ غیر مقامی افراد کومکان کرائے پر دینے سے قبل ا ن کی مکمل چھان بین کرلیں اور سب سے پہلے تھانہ کے اندر ان کی رجسٹریشن کروائیں اس سے ہم بہت سے پریشانیوں سے بچ سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پولیس کے دروازے عوام کے لیے کھلے ہیں آپ کو کوئی بھی مسئلہ درپیش آئے آپ پولیس سے رابطہ کرسکتے ہیں ہم آپ کی داد رسی کرنے کی ہر ممکن کوشش کرینگے۔

Facebook Comments